منگل, اکتوبر 16, 2012

دیوانِ غالب سے انتخاب


  • مہرباں ہو کے بُلا لو مجھے ،چاہو جس وقت
                                                     میں گیا وقت نہیں ہوں کہ پھر آ بھی نہ سکوں
           ضعف میں طعنہء اغیار کا شکوہ کیا ہے
                                                        بات کچھ سر تو نہیں ہے کہ اُٹھا  بھی نہ سکوں
           زہر ملتا ہی نہیں مجھ کو ستم گر ورنہ
                                                      کیا قسم ہے تیرے ملنے کی کہ کھا بھی نہ سکوں




  • شب کو کسی کے خواب میں آیا نہ ہو کہیں
                                                  دکھتے ہیں آج اس بت نازک بدن کے پاؤں


  • ہے مجھ کو تجھ سے تذکرہء غیر کا گلہ
                                         ہر چند بر سبیلِ شکایت ہی کیوں نہ ہو


  • عمر بھر کا  تو نے پیمانِ وفا باندھا تو کیا
                                عمر کو بھی تو نہیں ہے پائیداری ہائے ہائے

4 تبصرے:

  1. کیا بات ہے جی
    غالب کے شعر ہوں اور دل نہ موہ لیں ایسا ہو نہیں سکتا

    جواب دیںحذف کریں
  2. بلاگ پہ تشریف آوری کا شکریہ!
    بالکل جی، غالب کا اندازِ بیاں ذرا "وکھرا" ہے۔

    جواب دیںحذف کریں
  3. غالب صریر خامہ نواءے سروش ہے
    شمس الحق AKHSS گلگت

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. Buhat shukria Shams ul haq sahib. Ap merey blog per tashreef laey ye merey liye ezaz hy.

      حذف کریں