ہفتہ، 8 مارچ، 2014

خواتین کا عالمی دن: چند مطالبے

آج خواتین کا عالمی دن ہے۔میرے خیال میں اس دن پاکستان کی خواتین کو درج ذیل مطالبات  ضرورکرنے چاہیئں۔
1.      تمام خواتین کے لئے علیحدہ سے تعلیمی ادارے ہوں جہاں ان کو رسمی تعلیم کے ساتھ ساتھ ان دوسرے فرائض کے بارے میں بھی تربیت دی جائے جس کی ان کو گھریلو زندگی میں ضرورت ہوتی ہے۔مثلاً بچوں کی درست پرورش، ایک خوشگوار گھریلو ماحول کی تشکیل، اپنی سوتن اور ساس کے ساتھ حسنِ سلوک وغیرہ۔
2.      ٹیلی ویژن پر پیش کئے جانے والے ایسے ڈراموں کی حوصلہ شکنی کی جائے جن کی وجہ سے خواتین میں ایسے اخلاق پیدا ہوں جن کی وجہ سےمعاشرہ ان کو قبول نہ کر سکے۔
3.       ایسے عناصر (میڈیا اور فلم انڈسٹری) کی بھرپور حوصلہ شکنی اور ان کے خلاف اقدامات ، جو کہ پاکستان میں خواتین کے معروف کلچر کے برعکس خواتین کی جسمانی برہنگی کے فروغ میں مصروف ہیں۔
4.      شادی کے لئے معاشرے میں رائج جہیز کی رسم کی حوصلہ شکنی کے لئے اقدامات کئے جائیں جس کی وجہ سے کئی لڑکیوں کو بر وقت مناسب جیون ساتھی ملنا دشوار ہو جاتا ہے۔
5.      تعلیمی اداروں میں خواتین کے لئے خواتین ہی معلم ہوں تا کہ زیادہ سے زیادہ خواتین کو روزگار میسر آ سکے، زیادہ سے زیادہ خواتین علم کی روشنی سے فیض یاب ہوں سکیں اور خواتین  اپنے مسائل بے فکری اور نڈر پن کے ساتھ اپنے ہم جنسوں سے ڈسکس کر سکیں۔
6.      خواتین میں شعور پیدا کیا جائے تا کہ مرد کے لئے ایک سے زیادہ شادیاں کرنا آسان ہو اور زیادہ سے زیادہ خواتین کی کفالت ہو سکے۔
اس کے علاوہ بھی کچھ چیزیں ذہن میں تھیں۔ مگر وقت کی قلت ہے۔
والسلام

4 تبصرے:

  1. اگر یہ مطالبات سماج کے اجارہ داروں کو پتہ چل گئے تو آپ کی خیریت کیلئے دعائیں مانگنا پڑیں گی

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. افتخار صاحب!
      خوشی ہو گی جب لوگ ہمارےلئے دعائیں کریں گے۔

      حذف کریں
  2. چھٹا مطالبہ زیادہ پسند کیا جائے گا

    جواب دیںحذف کریں
    جوابات
    1. جی ہاں! مردوں کے مطلب کا جو ہوا۔

      حذف کریں